غزل الغزلات

رازِ دل آشکار آنکھوں میں
حشر کا انتظار آنکھوں میں

نعت

مَن رآنی کا مدعا چہرہ
صورتِ حق کا آئینہ چہرہ

شاہد و مشہود

نُورِ مجسّم
خَلق سے پہلے
ایک اکائی،واحد،یکتا
اپنی ذات میںتنہا مخفی،گنجینہ تھا
نور کا ہالا
اپنے آئینے کا باطن

سعدی ؒ اور واصفؒ

حکایت ِ سعدیؒ

میں نے سنا کہ ایک فقیر تنگ جگہ پر تھا۔حضرت عمرث کا پائوں اس کے پائوں پر جا پڑا ۔درویش کو کیا معلوم کہ وہ کون ہیں …کہ رنجیدہ شخص دشمن اور دوست میں تمیز نہیں کرتا… وہ درویش اُن پر غصے سے پل پڑا کہ کیا تو اندھا ہے ؟

حضرت واصف علی واصفؒ اور محفلِ سوال

یہ کائنات ایک سوال ہے۔ سوال در سوال، اور ہر سوال کا جواب صرف خالقِ
کائنات کے پاس ہے کیونکہ وہ ہر عمل میں با اختیار ہے ‘ جس کا جواز بھی اُس کے پاس ہے۔ صاحبِ جواز ہی صاحبِ جواب ہو سکتا ہے۔ سب سے پہلا سوال بھی اس نے خود ہی اٹھایا کہ میں نے کائنات کو تخلیق کیوں کیا؟

بھرے بھڑولے

کوئی وِرلا موتی لے تردا راہ کھوجو اپنے اندر دا
(اپنے اندر کا راستہ تلاش کرو کہ کوئی بالآخرخال خال کامیابی کاموتی لے آتاہے)
میں موتی اوس سمندر دا جو ٹھاٹھاں اَکّھاں وِچ م
(آنکھوںمیں جو سمندر ٹھاٹھیں مار رہا ہے‘میں اس سمندر کا موتی ہوں)
او غیراں دے کاسے بھردا جنّہے اپنا کاسہ توڑیا اے
(جس نے اپنا کشکول توڑ دیاہے‘ وہی دوسروں کے کشکول بھرتا ہے)
اج توں ایںمالک جس گھردا ایتھے لکھاں آکے ٹر گئے
( آج تم جس گھر(دنیا) کے مالک بنے بیٹھے ہو‘ اس کاحال یہ ہے کہ یہاںلاکھوں آئے اور چلے گئے )
ہن رگڑا کھا قلندر دا کی جانیا سی توں واصفؔ
(تو نے آخر واصفؔ کو کیا جاناتھا… اب اِس کے قلندرانہ جلال کا سامناکر !!)
فرہنگ : کھوجو:ڈھونڈو ، وِرلا: خال خال(منفرد) ، تردا : منزل پر پہنچنا،

اَکّھاں : آنکھیں ، جنّہے :جس نے ، کاسہ : کشکول ، لکھاں :لاکھوں ، ٹُر گئے :چلے گئے

واصفؒ خیال

واصف علی ہے نام اک ارفع خیال کا
پرتَو ہے ذاتِ پاک کے حُسن و جمال کا

حُسنِ اِنتخاب

دعا کرو کہ خدا امیر اور غریب کے بے انتہا فرق کو مٹا دے اور دعا ہے کہ غریب اپنی غریبی پر مایوس نہ ہو اور امیر اپنی امیری پر مغرور نہ ہو۔یہ تبھی ہو سکتا ہے کہ جب غریب‘ غریب نہ رہے اور امیر‘امیر نہ رہے۔اور ایسا وقت آسکتا ہے اور ایسا وقت ضرور آئے گا اور جلد آئے گا۔یہی تو اصل اعجازِ اسلام ہے کہ غریب ‘قوی ہوتا ہے اور دولتمند‘ بزدل۔اب مسئلہ صرف یہ ہے کہ جاننے والے خاموش ہیں اور بولنے والے جانتے نہیںہیں!!

خبرنامہ واصفین

’واصف ؒ خیال سنگت گوجرانوالہ‘‘ کے زیرِ اہتمام ۱۶ جنوری ۲۰۱۱ء بروز اتوار دوپہر ۲ بجے بمقام شیخ محمدیونس میموریل آڈیٹوریم ‘قائدِاعظم ڈویژنل پبلک کالج گوجرانوالہ میں تعلیمات ِ واصف ؒ کے حوالے سے ایک سیمینار منعقد ہورہا ہے

Prelude

Beloved is One Who is to Be loved. To be loved is a prime and primordial call of Beloved. It was said, long ago, beauty lies in the eyes of beholder……

THE BELOVED

How strange it is that when the father lost his beloved son, he also lost his vision and long afterwards on smelling the shirt of his missing son, his sight returned.

حرف آغاز

مسافر….سفر ….اورمنزل اس جہان ِ رنگ و بو میں ہر شئے مسافر ہے۔ ہر شئے موجود جامہ وجود پانے کیلئے سفر میں ہے ….لیکن اپنے اپنے رنگ میں….اپنی اپنی خوئے شوق کے مطابق ….اور اپنی ہی اُفتادِ ذوق کے موافق ! اس جہانِ ہست و بود میں ہر شئے اپنی نمود کی نہائت پر پہنچنےRead more…

صلِّ علٰی صلِّ علٰی

حضرت واصف علی واصف ؒ کے شعری مجموعہ ”شب راز“ سے انتخاب تصویرِ حُسنِ بے نشاں صلِّ علٰی صلِّ علٰی لاریب شاہِ خُسرواں صلِّ علٰی صلِّ علٰی اے چہرہ ِ زیبائے تو ‘ شمس الضحیٰ بدرالدُجٰی اِرحم لنا اے جانِ جاںصلِّ علٰی صلِّ علٰی مازاغ چشمِ سرمگیں ‘ واللّیل زلفِ عنبریں یٰسین دندانِ دہاں صلِّRead more…

امام حسینؑ

حضرت واصف علی واصف ؒ کے شعری مجموعہ ”شب راز“ سے منقبت اور رباعیات رہبرِ کارواں حسین ؑ‘ رہرہِ بے گماں حسین ؑ آج مگر کہاں حسین ؑ ‘ مرکزِ ہر فغاں حسین ؑ ہائے قتیلِ بے خطا‘ ہائے شہیدِ بارضا دشتِ بلا میں بے نوا ‘ راقمِ داستاں حسین ؑ اصغرؑ و اکبرؑ وRead more…

تلاش

حضرت واصف علی واصفؒ کی تصنیف ”دل دریا سمندر“ سے انتخاب ہر انسان کسی نہ کسی شئے کی تلاش میں سرگرداں ہے۔ کوئی کچھ چاہتا ہے ‘کوئی کچھ ڈوھونڈ رہاہے ۔ انسانوںکے ہجوم میں آرزوﺅں کا بھی ہجوم ہے۔ دشمن ‘ دشمن کی تلاش میں ہے اور دوست ‘ دوست کی تلاش میں۔ کائنات کیRead more…

غزل الغزلات

حضرت واصف علی واصف ؒ کے شعری مجموعہ ”شب چراغ“ سے انتخاب سنبھل جاﺅ چمن والوخطر ہے ہم نہ کہتے تھے جمالِ گُل کے پردے میں شرر ہے ہم نہ کہتے تھے لبوں کی تشنگی کو ضبط کااک جام کافی ہے چھلکتا جام زہرِ کارگر ہے ہم نہ کہتے تھے زمانہ ڈھونڈتا پھرتا ہے جسRead more…

جوازِ ہستی

حضرت واصف علی واصفؒ کی تصنیف ”حرف حرف حقیقت“ سے انتخاب اگر انسان کی کوئی آرزو پوری نہ ہو بلکہ ہر آرزو ٹوٹ چکی ہو ، یہاں تک کہ آرزو پیدا کرنے والا دل بھی ٹوٹ چکا ہو تو اُس آدمی کے لیے جینے کا کیا جواز ہے ؟ اگر انسان کی زندگی ایک ایسیRead more…

گفتگو

گفتگو جلد نمبر ۳۲ ٭ صفحہ نمبر ۸۴ سوال: مسلمانوں کو شرک سے منع کیا گیا ہے۔ کون سی باتیں ہیں جو شرک کے دائرے میں آتی ہیں؟ جواب: شرک نمبر وَن یہ ہے کہ عبادت کے عمل میں اللہ کے علاوہ کسی اور شے یا کسی اور ذات کو وجہ عبادت سمجھنا شرک ہے۔Read more…

اقتباساتِ گفتگو

مقام : ۲۲ فردوس کالونی گلشن راوی، لاہور ٭ مورخہ : ۲۱ نومبر ۷۸۹۱ئ حضرت واصف علی واصف ؒ غلطی کے بعد اس پر بحث نہ کیا کرو بلکہ غلطی کا جلد از جلد اعتراف کیا کرو۔ * * اگر آپ کو اپنی ذات کے بارے میں علم ہو جائے تو یہی عرفان ہے ….Read more…

قائدِ اعظم

بے رنگ ہوئے سرو و سمن قائدِ اعظمؒ ہم بھول گئے عہدِ کُہن قائدِ اعظمؒ اُڑتے ہیں یہاں زاغ و زغن قائدِ اعظمؒ اُس قوم نے اوڑھا ہے کفن قائدِ اعظمؒ دنیا بھی ہے فن ‘دین بھی فن قائدِ اعظمؒ ہے زار و زبوں ارضِ وطن قائدِ اعظمؒ پردیس بنا اپنا وطن قائدِ اعظمؒ ہمRead more…