حضرت واصف علی واصف رحمتہ اللہ علیہ کے شعری مجموعے ”شب چراغ“ سے انتخاب

بامِ اقصیٰ سے چلا رشکِ قمر آج کی رات
فرشِ رہ ہو گئی تاروں کی نظر آج کی رات

مِثلُکُم ہی سہی انسان مگر آج کی رات
عرش پر کرنے گیا ہے وہ بسر آج کی رات

ڈھل گئے نُور میں سب ارض و سماءکون و مکاں
لامکاں تک ہوئی پروازِ بشر آج کی رات

”قابَ قَوسَین“ سے ادنیٰ ہے مقامِ محمود
سر نگوں کر گئی ادراک کا سر آج کی رات

عشقِ بے تاب کی کیا بات ہے اللہ اللہ
کھل گئے گنبدِ افلاک کے در آج کی رات

شبِ اسریٰ پہ ہوں قربان ہزاروں راتیں
بزمِ ہستی کی ہے تابندہ سحر آج کی رات

بے خبر ‘ رفعتِ آدم سے ہے جبریلِ امیں
منزلِ ”سدرہ“ ہوئی گردِ سفر آج کی رات

مرحبا سیّدِ مکّی مدنی العربی
عرش سے لائے دعاﺅں کا اثر آج کی رات

حُسن ہے حدّ ِتعیّن سے وَرا ءآج کی رات
چل دیا سوئے خدا ‘نورِ خدا آج کی رات

آج کی رات ہے تکمیلِ عروجِ آدم
حُسنِ تخلیق پہ نازاں ہے خدا آج کی رات

آ گیا جوش میں رحمت کا سمندر اِمشب
گنجِ مخفی ہوا مائل بہ عطا آج کی رات

نکہت و نور میں ڈھلنے لگے لمعاتِ جمال
چشمِ فطرت ہوئی حیراں بخدا آج کی رات

دل دھڑکتے ہیں ستاروں کے ، قمر چشم براہ
حور و غلماں نے کہا ”صلِّ علیٰ“ آج کی رات

خوشبوئے گیسوئے واللّیل سے مہکا عالم
چشمِ ”مازاغ“ ہوئی جلوہ نما آج کی رات

بزمِ رنداں نہ ہوئی ورنہ یہ کہتا واصف
حُسن خود شوخی رندانہ ہوا آج کی رات

دم بخود گردشِ افلاک و زمیں آج کی رات
سر نگوں چاند ستاروں کی جبیں آج کی رات

جگمگاتا ہی رہے عرشِ بریں آج کی رات
لامکاں میں ہوا انسان مکیں آج کی رات

شوقِ دیدار کی کیا بات ہے اللہ اللہ
درمیاں میم کا پردہ بھی نہیں آج کی رات

منزلِ سدرہ سے آگے ہے مقامِ محمود
دیکھتے رہ گئے جبریلِ امیں آج کی رات

حُور و غلمان و ملائک کی زباں پر آیا
حُسن ہے حدِّ تعیّن سے حسیں آج کی رات

جانے والا اسے سمجھے کہ بلانے والا
کوئی اس راز کا ہمراز نہیں آج کی رات

رفعتِ صاحبِ لولاک کوئی کیا سمجھے
خاک پرگھِستی رہی عقل‘ جبیں آج کی رات

آج کی رات دعا مانگ رہا ہے واصف
کر عطا ربِّ عُلیٰ فتحِ مبیں آج کی رات