رجب13  ‘جشن ِ ولادتِ حضرت علی کرم اللہ وجہہ الکریم کی مناسبت سے حضرت واصف علی واصف رحمتہ اللہ علیہ کے شعری مجموعہ ”شب چراغ “ سے انتخاب۔ اس منقبت کے بیشتر اشعار نصرت فتح علی خاں نے قوالی کی صورت میں پیش کئے ہیں

بس رہی ہے فضاﺅں میں خوشبو
پھر کھنکنے لگے ہیں جام و سُبو

سوزِ دل سے چراغ جلتا ہے
درد غربت کدے میں پلتا ہے

اُنؑ کا فیضِ نظر ملا ہے مجھے
اُنؑ کی شفقت کا آسرا ہے مجھے

اُنؑ کی مدحت مری مجال نہیں
ہے اُنہی کا ‘ مرا کمال نہیں

اُنؑ کے سائے سے پیار کرتا ہوں
جان اُنؑ پر نثار کرتا ہوں

جن کی ہیبت سے سر نِگوں اصنام
وہی مولاؑ اِمامِ عالی مقام

وجہِ عرفانِ اولیائے جہاں
زد میں ہیں جن کی لامکان و مکاں

نام جن کا علی ؑ اسد اللہ
جن کا چہرہ بنا ہے وجہُ اللہ

سوز و ساز و سخن علی ؑ مولا
سایہ ذوا لمنن علی ؑ مولا

ردِ ّ رنج و محن علی ؑ مولا
زینت ِ انجمن علی ؑ مولا

میرے من کی لگن علی ؑ مولا
رازِ خیبر شِکن علی ؑ مولا

سرِّ سرِّ نہاں علی ؑ مولا
بے نشاں را نشاں علی ؑ مولا

رہبرِ اِنس و جاں علی ؑ مولا
بابِ علمِ رواں علی ؑ مولا

فخرِ ختمِ رُسل علی ؑ مولا
آفتابِ سُبل علی ؑ مولا

شیرِ یزداں علی ؑ ولی اللہ
شاہِ مرداں علی ؑ ولی اللہ

لا فتیٰ برملا ‘ علی ؑ حیدر
ساقی میکدہ ‘ علی ؑ حیدر

ہیں نگاہِ رسول کے مقبول
وارثِ دینِ حق پناہِ بتولؓ

فیض اُنؑ کی نظر سے ملتا ہے
کب اِدھر یا اُدھر سے ملتا ہے

میں نے جب بھی اُنہیں پکارا ہے
اِک صدا آئی ”تو ہمارا ہے“

فیضِ عالم ہیں مظہرِ اَنوار
اُنؑ کے صدقے میں ہو گا بیڑا پار